اک چھوٹی سی  کہانی ۔۔۔ تحریر : مدیحہ ریاض

۔18۔ویں سن چڑھتی وہ الہڑ دوشیزہ
جب بات کرتی تو گویا چڑھتی جوانی بولتی
اور وہ اس چڑھتی جوانی کے سمندر کو
بد مستی نگاہوں سے تکتا
اسے وہ کسی شاعر کا خواب لگتی
اس کا چڑھتا شباب اسے دیوانہ کر گیا
بات کی وہ نہ مانی
التجا کی وہ پھر بھی نہ مانی
پھر قسم دی اسےاپنی خمار محبت کی
تو اس نے کہا رشتہ لاؤ
ماں نےکہا بیٹا وہ کیا گھر بسائے گی
جیسی ماں ویسی بیٹی

(Visited 25 times, 1 visits today)

One Response to اک چھوٹی سی  کہانی ۔۔۔ تحریر : مدیحہ ریاض

  1. I like the helpful information you supply to your articles.
    I will bookmark your blog and check once more here regularly.
    I am slightly certain I’ll be told plenty of new stuff proper right
    here! Best of luck for the next!

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *