سنو۔۔۔۔۔۔! “جاناں” تمھاری مُحبت بھی محض ۔۔۔ تحریر : شاعرہ ثناء خان تنولی

سُنو “جاناں”۔۔۔!۔
تمھاری مُحبت بھی محض
اک ڈرامہ ہی تھی۔۔۔۔۔۔
بس تم اِس ڈرامے میں اپنا کردار
اچھے سے نہیں نبھا پائے۔۔۔۔۔۔
جو بھی چند اک
“مجبوریاں”
گنوائی تھیں ناں’ تم نے۔۔۔
وہ سب بھی ڈھونگ تھیں۔۔۔!۔
کاش !!!!۔۔۔
زرا پہلے بتا دیتے تم ،تو
اس کہانی کے مرکزی
کردار سے میں خود ہی
دستبردار ہو جاتی۔۔۔
یا پھر، اس کہانی کی
سکرپٹ تو مجھ سے
لکھوا لی ہوتی۔۔۔
کہانی کے اختتام پر میں
خود ہی تمھیں چھوڑ جاتی۔۔۔
کہ دل اپنا آپ ہی توڑ جاتی.۔۔۔!!۔

(Visited 5 times, 1 visits today)

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *