شاعری

نعتؐ شریف : زاہد توقیرؔ ۔ کمالیہ

سر یقین درودوں کا کارواں ٹھہرے تو تیرگی میں بھی روشن مرا مکاں ٹھہرے جو دیکھ پاؤں ترے در کی رحمت یکتا مری نگاہ زمانے میں پھر کہاں ٹھہرے رفیق جائیں کہاں چھوڑ کر تری قربت کہ تیرے در پہ

غزل ۔۔۔ شاعر : زاہد توقیرؔ ۔ کمالیہ

پھر مجھے خاک میں ہی چاہے ملایا جائے مجھکو اک بار مرے سامنے لایا جائے روز رونے سے بصارت بھی تو جا سکتی ہے روز مت اہل ستم مجھکو رلایا جائے شوق منزل نے ہی رستے کو سہارا ہوا ہے

سنو۔۔۔۔۔۔! “جاناں” تمھاری مُحبت بھی محض ۔۔۔ تحریر : شاعرہ ثناء خان تنولی

سُنو “جاناں”۔۔۔!۔ تمھاری مُحبت بھی محض اک ڈرامہ ہی تھی۔۔۔۔۔۔ بس تم اِس ڈرامے میں اپنا کردار اچھے سے نہیں نبھا پائے۔۔۔۔۔۔ جو بھی چند اک “مجبوریاں” گنوائی تھیں ناں’ تم نے۔۔۔ وہ سب بھی ڈھونگ تھیں۔۔۔!۔ کاش !!!!۔۔۔ زرا

میرے دل کے ہر اِک تار پر ۔۔۔ ترا نام تھا جولکھا ہوا ۔۔۔ تحریر : شاعرہ ثناء خان تنولی

میرے دل کے ہر اک تار پر ترا نام تھا جو لکھا ہوا۔۔۔ غمِ دل کی حسرتوں نےخار میں اُسے رَگڑ رَگڑ کر مٹا دیا۔۔۔!۔ میری زُباں جو تیری مثال تھی۔۔۔ تیرے ہر اک سوال کا جواب تھی موئے دل

مُجھے اِک تماشا بنا دیا ۔۔۔ تحریر : شاعرہ ثناء خان تنولی

میرے دل کے ہر اک تار پر ترا نام تھا جو لکھا ہوا ۔۔۔ غمِ دل کی حسرتوں نےخار میں اُسے رَگڑ رَگڑ کر مٹا دیا ۔۔۔ ! ۔ میری زُباں جو تیری مثال تھی۔۔۔ تیرے ہر اک سوال کا

برقی پھول اب بھیج دئیے جاتے ھیں ہمیں ۔۔۔ تحریر : شاعرہ ثناء خان تنولی

<<<نظم>>> برقی پھول اب بھیج دیئے  جاتے ھیں ہمیں تحفے میں  تیری مصروفیات لے چلیں  ھیں بازی ہماری محبت پر۔۔۔ تمھیں یاد ھے ناں “جاناں”۔ وہ سردیوں کی ٹھنڈی رات ۔۔۔ جب میرے لئے گلاب کا پھول لئے تم گھنٹوں

ملنے چلے آؤ ۔۔۔ تحریر : شاعرہ ثناء خان تنولی

چھوڑ کر سب ہی سلسلے، ملنے چلے آؤ ۔۔۔ یہی موسم کا تقاضا ھے یہی میری مرضی!!۔ پہلے تو یوں کبھی دل میں اُداسی نہ تھی چھائی یہی ضد ھے،، اور یہی ٹھہری دل کی عرضی!!۔ بُھول کر سب ہی

اُففف!! ۔۔۔۔۔۔ یہ بارشیں بھی کتنی ۔۔۔ تحریر : شاعرہ ثناء خان تنولی

اُففف!!۔۔۔۔۔۔۔۔ یہ بارشیں بھی کتنی عجیب ھیں ناں!!۔۔ کبھی تو کسی روتے ہوئے کوبھی اپنی بوندوں کی نرمی کا احساس دلا کر اس کے آنسوؤں کو پانی میں بہا دیتیں ھیں ۔۔۔۔۔۔، اس کے چہرے پر ایک انجان سی مسکراہٹ

چلو اِک کام کرتے ھیں ۔۔۔ تحریر : شاعرہ ثناء خان تنولی

چلو    اِک     کام     کرتے     ھیں ہم خود کو تیرے نام کرتے ھیں چلو    اِک    شام    رکھتے    ھیں ہم  جوانی  سرِ بام  رکھتے ھیں چلو   اِک  ملاقات   رکھتے  ھیں ہم  خود  کو   بدنام  کرتے  ھیں چلو  اِک    سوغات  رکھتے  ھیں ہم

میں وہ لڑکی ھوں ۔۔۔ تحریر : شاعرہ ثناء خان تنولی

میں وہ لڑکی ہوں کہ دیکھ کر جس کو چاند زمین پر آ بھی تو سکتا ھے۔۔۔ میں وہ لڑکی ہوں کہ جس کی آھٹ پر پرندے سبھی چھپے درختوں کی ٹہنیوں پر اپنے گھونسلوں میں نکل کر آ بھی

میرا جنگل تاریک و سنسان ہے بہت ۔۔۔ شاعرہ ثناء خان تنولی

میرا جنگل تاریک و سُنسان ہے بہت پنجرا توڑ کر اُڑنے کی جُستجو لئے پرندے بھی سب ھی افسردہ ہیں.. درختوں کی خشک ٹہنیاں لٹک آئیں، اور زرد پتے بھی جھڑ رہے ہیں اُنکے پھول ڈالیوں پر ہی مرجھا گئے

شاعری ۔۔۔ اسماء طارق ۔ گجرات

دل جلانے کی بات کرتے ہو ایسے آنے کی بات کرنے ہو ہمیں در در رول کر ٹھکانے کی بات کرتے ہو ہمیں راستوں کی خبر نہیں تم منزلوں کی بات کرتے ہو ہم سے شوق آرزو چھین کر ملنے

شاعری ۔ اسماء طارق ۔ گجرات

خط جو لکھا اس نے آخری پنڈ کے نام اس پہ لکھی کہانی میری زبانی تھی وہ شرمندہ تھا یہ اک نئی کہانی تھی پر پنڈ کی یہ لڑکی اتنی ہی پرانی تھی وہ لڑکا تھا نئے زمانے کا اور

شاعری ۔۔۔ اسماء طارق ۔ گجرات

جان کی اب کوئی مانگ نہیں ہتھیلی پہ رکھ کہ چلتا ہوں کیا خبر کب چھین لی جائے اسی ڈر سے زور مرتا ہوں موت مجھ کو کیا ڈرائے گی میں تو جینے سے ڈرتا ہوں جب مخافط ہی ٹھہرے

شاعری ۔۔۔ اسماء طارق ۔ گجرات

اسے کرنا ہی نہیں تھا اعتبار مجھ پہ میرے خلوص میں وگرنہ کمی تو نہ تھی وہ لوٹ گیا مجھے قصور وار ٹھہرا کہ اسے لوٹنا ہی تھا بات وگرنہ اتنی تو نہ تھی میرے ہمدم چلنا اسے گوارہ ہی

شاعری ۔۔۔ اسماء طارق ۔ گجرات

حاکم کے سر پہ تاج ہے محکوم پاؤں کی خاک ہے تو نے دیکھی ہو گی جسموں کی غلامی، یہاں تو روحیں بھی غلام ہیں مظلوم پہ جہنم واصل ہو ظالم کی جنت ہے یہ کیسا نظام ہے جہاں ظلم

شاعری ۔۔۔ اسماء طارق ۔ گجرات

کسی خواب کی تعبیر ہوں میں کسی عزم کی تکمیل ہوں میں کسی داستان کا مرکزی خیال ہوں میں کسی کردار کا مکمل حوالہ ہوں میں کہیں آغاز کہیں اختتام ہوں میں کہیں سورج کہیں چاند ہوں میں کہیں دھوپ

شاعری ۔۔۔ اسماء طارق ۔ گجرات

یہ کہاں تو نے انقلاب انقلاب لگا رکھا ہے جہاں لوگوں نے سچ پر نقاب اٹھا رکھا ہے یہاں سب نے منافقانہ انداز اپنا رکھا ہے سامنے گلاب پیچھے خنجر اٹھا رکھا ہے اے سخن وری ہم تو تجھے آزاد

شاعری ۔۔۔ اسماء طارق ۔ گجرات

راستے گہرے الجھے ہیں چلو گھر چلتے ہیں قدم اٹھتے نہیں اب چلو گھر چلتے ہے لاحاصل کی جستجو نہیں اچھی چلو گھر چلتے ہیں مناتے مناتے تھک جاو گے چلو گھر چلتے ہیں یوں دل جلانا بھی تو اچھا

اے پاکستان تیرا احسان ہے ۔۔۔ تحریر : اسماء طارق ۔ گجرات

اے پاکستان تیرا احسان ہے ، احسان تجھ ہی سے ہے آن ہماری ،شان ہماری تیری خاطر ہر مشکل سے لڑ جائیں گے سر کٹائیں گے ، جان دے دیں گے اے ارض وطن تو ہے علامت عظمتوں کی تیرا