غزل ۔۔۔ شاعرہ : تنزیلہ یوسف

میرا ماضی بھی لے گیا ہوگا
میرا بچپن میری گڑیا بھی لےگیا ہوگا

گولی اور بارود سے فضا مہکی ہے
خوشبوو تتلی اپنےسنگ بھی لے گیا ہوگا

میں ہوں تری یاد ہے اور سرما کی رت
موسم وصل تجھ کو بھی لے گیا ہوگا

ہم فقیروں کو گداگری ہی کافی ہے
اے سخی! تومیری صدا بھی لے گیا ہوگا

زندہ ہوں جینے کے لئے اتنا ہی کافی ہے
زندگی ترے ساتھ حوصلہ بھی لے گیا ہوگا

میں ہوئی بے آبرو تری راہوں میں
کوئی قاتل میرا گماں بھی لےگیا ہوگا

آکہ مل کر کریں آہ و فغاں
نالہ و بلبل صیاد بھی لےگیا ہوگا

(Visited 29 times, 1 visits today)

One Response to غزل ۔۔۔ شاعرہ : تنزیلہ یوسف

  1. It’s the best time to make some plans for the future and it’s
    time to be happy. I have read this post and if I could I desire to suggest you
    some interesting things or tips. Perhaps you can write next articles referring to
    this article. I want to read more things about it!

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *