‎رانا بشارت علی خان صدر انٹرنیشنل ہیومن رائٹ مومن یونائیٹڈ نیشن کی ساتویں کانفرنس میں شرکت کے لئے 24 نومبر کو برطانیہ سے جنیوا سویٹزرلینڈ کے لئے روانہ ہوں گے

‎برطانیہ ( ڈاکٹر غلام مرتضیٰ ۔ ایڈیٹر ہماری بات پاکستان ) برما کے مسلمانوں کے لئے یونائیٹڈ نیشن کے پاسپورٹ کا اجراء کے لیے ‎رانا بشارت علی خان پچیس تاریخ کو مقامی کونسل کی طرف سے برما فلسطین اور کشمیر کے مسلمانوں کے لئے اپنی آواز بلند کریں گے اور 26 تاریخ کو وہ یونائیٹڈ نیشن کی طرف سے منعقد ساتویں کانفرنس میں اپنے خیالات کا اظہار کریں گے ان کا ایجنڈا برما کے مسلمانوں کے لئے یونائیٹڈ نیشن کے پاسپورٹ کا اجراء کا ہوگا تا کہ برما کے مسلمان جو دنیا بھر میں بغیر پاسپورٹ کے ذلیل اور رسوا ہو رہے ہیں ان کو ایک انٹرنیشنل پاسپورٹ دیا جائے تا کہ ان کی آئندہ آنے والی نسلیں تعلیم کے حصول کے لیے دنیا بھر میں اپنا سفر کر سکے اس وقت برما کی قوم دنیا میں وہ واحد قوم ہے جس کے پاس اپنے ملک کا پاسپورٹ نہیں اور ایک بہت بڑا مسئلہ ہے اس کے علاوہ رانا بشارت علی خان یمن کے معاملے پر بھی یونائیٹڈ نیشن سے درخواست کریں گے کہ وہ آگے بڑھ کر یمن اور سعودی عرب کے مسئلہ کو حل کرنے کی کوشش کریں کیونکہ اس کی وجہ سے ہزاروں لاکھوں لوگ دربدر ہوچکے ہیں اور خطے میں بڑھتی ہوئی بدنظمی اور بے امنی آنے والی نسلوں کے لیے نقصان دہ ہو سکتی ہے اگر اس جنگ کو یہاں پر نہ روکا گیا تو یہ پورے خطے کو اپنے اثر میں لے کر نقصان دے ثابت ہوگی اور جس کو سنبھالنا آئندہ آنے والے دنوں میں انتہائی مشکل ہو جائے گا اور درخواست کریں گے کہ وہ آگے بڑھے اور اس کے خلاف کوئی عملی جامہ بھی اٹھائی اور اس کے علاوہ رانا بشارت علی یونائیٹڈ نیشن سے درخواست کریں گے کہ برما کے مسلمانوں پر ہونے والی زیادتیوں کے خلاف انہیں کوئی اقدام اٹھانا پڑے گا کیونکہ آگے سری آرہی ہیں اور برما کے مسلمان لاکھوں کی تعداد میں بنگلہ دیش اور اردگرد کے ممالک میں بے سروسامان کھلے آسمان تلے بے سروسامان بیٹھے ہیں نہ ہی ان کے پاس سرد کپڑے ہیں نہ ہی ان کے پاس کھانا ہے نہ ہی میڈیسن ہے اور نہ ہی رہنے کے لئے کوئی چھت ہے اگر ہم نے ان کے بارے میں اس وقت نہ سوچا تو ہم لاکھوں جانوں کو خطرے کے نزدیک چھوڑ دیں گے ہیں ہمیں انتہائی سختی کے ساتھ اس بات کو یاد رکھنا ہوگا کہ ان مسلمانوں کے لئے میڈیسن گرم کپڑے اور گرم خوراک کی اشد ضرورت ہے اور اس کے لئے یونائیٹڈ نیشن اپنا رول ادا کریں اور برما کے مسلمانوں کے لیے ہنگامی طور پر امداد کا اعلان کریں تاکہ وہ ان کیمپوں میں سخت سردی اور سخت موسم کا مقابلہ کر سکے یونائیٹڈ نیشن کو ہنگامی طور پر ان ممالک کی مدد کرنے کی ضرورت ہے جہاں پر برما کے مسلمان پناہ گزین ہیں تاکہ وہ آنے والے موسم کا مقابلہ کر سکے یونائیٹڈ نیشن کا برما کے مسلمانوں کا مستقل طور پر کوئی حل نکالنا چاہیے اور میامار گورنمنٹ پر عالمی سطح پر پابندی عائد کریں تا کہ وہ برما کے مسلمانوں پر ظلم کرنا بند کرے اس کے لئے انتہائی سخت اقدام اٹھانے کی ضرورت ہے

(Visited 13 times, 1 visits today)

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *