شاعری : محمد جواد خان

اصول و اسلوبِ زندگی (حصہ سوئم ۔شاعری)۔

ہم یاد کرتے رہے وہ یاد آتے رہے
اس کشمکش مین دن رات گزرتے رہے
J.Dنہیں آیا کوئی لوٹ کر وہاں سے
برسوں ہم جہاں اپنوں کو چھوڑ کر آتے رہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
J.Dکیا گزری ہیں؟کیا بتائیں؟کیسے بتائیں؟ چلو اسکو بتائیں
آؤ آج ہم دسمبر کو دسمبر میں دسمبر سے دسمبر کی طرح ملائیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
J.Dوہ یاد کیا آیا کہ جاگ اُٹھیں سب ہی خواہشیں
تازہ درد، گرم سانسیں، سرد ہوائیں اور دسمبر کی لمبی راتیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

(Visited 68 times, 1 visits today)

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *