روداد زیست (غیر مطبوعہ ناول) ۔۔۔ تحریر : صفیہ انور صفی

سفید پوشاک میں لپٹارفیع ماسلف کو بھلائے ماہ طلعت لگ رہا تھا۔افتاب سحر نے بہن کو روتے ہوئے کہا۔۔۔

”فائزہ بہن۔۔۔۔۔ربااللرباب کی مرضی کے اگے ہم کوئی مبارزت نہیں کر سکتے۔۔۔جس ذات نے پیدا کیا۔۔۔۔۔
اسی کے پاس ہمیں لوٹ کر جانا ہیقانون قدرت کو نہیں روک سکتا”

”مگر بھائی۔۔۔۔۔پہلے کمال۔۔۔۔۔اور.۔اب رر۔۔۔رر۔۔۔رفیع۔۔۔۔۔کیوں۔۔۔بتائیے نا۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیوں۔۔۔۔۔؟؟؟”۔

”فائزہ بہن۔۔۔سنبھالیے اپنے اپ کو۔۔۔
ر۔۔ر۔۔رفیع کا اخری دیدار کر لیں پھر ہم جنازے کے لئے لے جائیں”۔

اواز گریہ بلند کرتے ہوئے افتاب سحر نے غمزدہ بہن سے التجا کی۔

” نہیں۔۔۔۔۔ کو۔۔۔۔۔ئی۔۔۔۔ہا۔۔۔ہا۔تھ نہیں لگائے گا میرے بچےّ کو”۔ْ

نیم جاں فائزہ بیگم نے رفیع کے پلنگ کو پکڑا تو اہیں اور سسکیاں فضا میں بلند ہو گیءں۔تمام خواتین فائزہ بیگم کے دکھ اور کرب کو سمجھ رہی تھیں اور جانتی تھیں کہ اس وقت تسلی لاطائل ہوتی ہے۔جس کا لال بچھڑ گیا ہو۔۔۔۔۔جس کی دنیا ہی اجڑ گئی ہو۔۔۔کیسے اس کے اجڑے دل کو تسلی دیں۔

(Visited 6 times, 1 visits today)

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *