شگوفہء سحر ۔۔۔ تبصرہ : سباس گل

کتاب: شگوفہء سحر
مصنف: ابنِ ریاض
تبصرہ: سباس گل
اہتمام : آر ا یس مصطفیٰ
ابنِ ریاض کی یہ پہلی کتاب ان کے کالموں اور انشائیوں کا مجموعہ ہے۔ اس کتاب کا پیش لفظ لکھنے کا اعزاز بھی ہمیں حاصل ہے تاہم کتابی شکل میں اسے دیکھ کر نہایت مسرت ہوئی۔ ابنِ ریاض سے ہم اس وقت سے متعارف ہیں کہ جب وہ عمران احمد اعوان تھے۔ ان میں لکھنے کی صلاحیت موجود تھی مگر اپنی منصبی مصروفیات کی بنا پر وہ اس کو سنجیدہ نہیں لیتے تھے تاہم پچھلے کچھ برسوں میں ان کے انشائیے ملک کے قریب قریب سبھی اخبارات کی زینت بن چکے ہیں اور ان کے مداحوں کا ایک بڑا حلقہ ہے۔
شگوفہء4 سحر اپنے نام کی طرح شگوفے بکھرہتی ایسی کتاب ہے کہ جس کا ہر کالم ایک نئے رخ اور ایک نئے زاویئیسے زندگی
کے مختلف پہلوؤں کا احاطہ کئے ہوئے ہے۔ابن ریاض مزاحیہ نثر لکھنے کے ماہر ہیں اور اسی وجہ سے جانے جاتے ہیں۔مزاحیہ نثر میں “ہم بھی میرا سے کم نہیں”،”ہمیں تو ایسی شادی نہیں کرنی”،”ہر دوسری لڑکی ابن ریاض کی پرستارہے” اور دیگر بہت سے کالمز نہایت عمدگی سے قلمبند کئے گئے ہیں جو بے اختیار مسکراہٹ لانے کا سبب بنتے ہیں۔ ابنِ ریاض زندگی کے عام واقعات سے مزاح کشید کرتے ہیں۔’ ہم نے گاڑی چلانا سیکھی،، ہم نے گاڑی چلائی، اور ‘ہماری آنکھ بیتی، ایسے ہی کالمز ہیں کہ جن میں مصنف نے اپنے ذاتی تجربات کو اتنے دلکش انداز میں بیان کیا گیا ہے کہ پڑھتے ہوئے مسکراہٹ بے اختیار قاری کے لبوں پررقصاں ہو جاتی ہے۔
اس کے ساتھ آپ کو کچھ سنجیدہ کالمز بھی پڑھنے کو ملیں گے جیسا کہ “میں کس کے ہاتھوں اپنا لہو تلاش کروں” ،”مارٹن کرو’ ایک عہد” ” شاید کہ تیرے دل مین اتر جائے میری بات” اس بات کے غماز ہیں کہ طنز ومزاح ہو یا سنجیدگی پر مبنی کالمز ،لکھنے کا فن آپ میں بدرجہ اتم موجود ہے۔اور آپ اپنے قلم سیجادو جگاتے ہیں۔ ابنِ ریاض پاکستان میں نہیں رہتے مگر وہ ملک کے حالات سے ہر گز غافل نہیں۔”کچھ جماعتیں،کچھ قائدین” میں وہ سیاسی جماعتوں اور ان کے قائدین کو طنز کا نشانہ بناتے ہیں تو دودھ جیسی نعمت میں ملاوٹ پر بھی وہ خاموش نہیں ہو پاتے اور اپنے مخصوص انداز میں اپنے کرب کا اظہار کرتے ہیں۔
کرکٹ کی پیچیدہ اور تکنیکی تفصیلات کو کرکٹ سے متعلق کالمز میں آسان فہم انداز میں بیان کرنے کا فن آپ کو ہی آتاہے۔ اس سے آپ کے کرکٹ سے لگاو اور ٹیکنیکیلیٹیز کاادراک ہوتا ہے۔”شاہد آفریدی پر تنقید کیوں ہوتی ہے”، “پاکستان ٹیم کی کوچنگ پھولوں کی سیج نہیں ” اور ایسے بہت سے کالمزکرکٹ سے دلچسپی رکھنے والے قارئین کے لئے انمول تحفہ ہیں۔کرکٹ میں بھی ان کی حسِ مزاح ان کا دامن نہیں چھوڑتی۔ ‘کرکٹ اور لڑکی ایک دوسرے کی سوکن ہیں’، ‘ مصباح الحق اور ایک سیاسی قائد’ اور ‘پاکستان سپرلیگ’ان کے ایسے ہی کالم ہیں کہ جن میں وہ مزاح کے چٹکلوں سے قارئین کو محظوظ کرتے ہیں۔

اس کتا ب میں ابن ریاض کے قلم سے زندگی کے مختلف شعبوں میں کارہائے نمایاں سرانجام دینے والی شخصیات کا تعارف ملے گا۔ جنہیں آپ نے نہایت عمدگی سے خراج تحسین پیش کیا گیا ہے۔ گنجِ گراں مایہ، نایاب ہیں ہم اور “یہ پھول کھل کر مسکرا نہ سکا” اسی سلسلے کی کڑیاں ہے۔
چند کلموں میں ماضی کی یاد بھی تازہ کی گئی ہے۔کچھ کالمز تو ایسے ہیں کہ جنہیں پڑھتے ہوئییہ احساس ہوتا ہے جیسے ہم اس دور میں پہنچ گئے ہوں اور سارے حالات واقعات ہماری نظروں کے سامنے وقوع پذیر ہو رہے ہوں۔مختصر الفاظ میں یہی کہوں گی جیسے اس کالم کے ساتھ ہم بھی سفر کررہے ہوں۔ “کرکٹ کے پر مزاح واقعات ” اس بات کی عکاسی کرتا ہوا خوبصورت کالم ہے۔ جس کے بارے میں ، میں یہ ضرور کہوں گی کہ آپ اس کالم کوصرف ایک دفعہ پڑھنے پر اکتفا نہیں کریں گے بلکہ بار بار پڑھنے پر مجبور ہوجائیں گے۔
پیش لفظ میں مصنف نے ایک دعویٰ کیا تھا کہ یہ کالمز ایک روزہ نہیں بلکہ جب بھی کوئی بھی اسے پڑھے گا اسے اسی دور سے متعلق محسوس ہوگا۔شگوفہ سحر پڑھنے کے بعد میں یہ کہنے پر مجبور ہوگئی ہوں کہ آپ نے اپنیاس دعویٰ کو سچ ثابت کیا ہے۔
” عمران اعوان سے ابن ریاض تک ” سے “بھائی بہت” تک ہر کالم اپنے اندر ایک نیا موضوع لئے ہوئے ہے خواہ وہ سنجیدہ کالم ہے یا ظنزو مزاح پر مبنی مصنف ہر موضوع کو اس انداز میں پیش کرتے ہیں کہ قاری اسے شروع سے آخر تک تسلسل سے پڑھتا چلا جائے۔
مصنف کیونکہ ابن انشا ء سے بے حد متاثر نظر آتے ہیں لہذا آپ کے انداز تحریر سے ابن انشاء سے مماثلت کا رنگ جھلتا ہے۔میں پورے یقین سے یہ کہہ سکتی ہوں کہ جنہوں نے ابن انشاء4 کو پڑھا ہے وہ اگر ابن ریاض کی اس کتا ب کو پڑھیں گے تو انہیں ابن ریاض میں اس دور کے ابن انشاء کا گمان ہو گا۔

(Visited 38 times, 1 visits today)

One Response to شگوفہء سحر ۔۔۔ تبصرہ : سباس گل

  1. Great delivery. Solid arguments. Keep up the amazing spirit.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *