Tag Archives: شیخ خالد زاہد

غزل ۔۔۔ شاعر : شیخ خالد زاہد

سنبھل جانے کی بھی مہلت نہیں ملتی خدا جو روٹھ جائے کوئی سہولت نہیں ملتی آئینے میں کھڑے ٹٹولتے رہتے ہیں اپنی ہی اب ہمیں صورت نہیں ملتی سب اپنی خواہشوں کی قید میں جیتے ہیں کرنے کی بچوں کو

پاکستان کی سالمیت کا مسئلہ ___ تحریر : شیخ خالد زاہد

ہمیں کسی کام کو کرنے کیلئے کوئی ضرورت اور اسکی اہمیت اکساتی ہے اور اسی سے یہ اخذ ہوا کہ ضرورت ایجاد کی ماں ہے ۔مگر کیا ضرورت پوری ہوجانے کہ بعد وہ ایجاد روک دی گئی ؟ جی نہیں

شکریہ ! پاکستان کرکٹ ٹیم ___تحریر : شیخ خالد زاہد

 پاکستان کرکٹ ٹیم جب چیمپینز ٹرافی میں شرکت کیلئے انگلینڈ روانہ ہو رہی تھی تو شائد ہی کوئی ایسا فرد ہوگا جس نے یہ کہنے سے گریز نا کیا ہو کہ گھومنے پھرنے جا رہے ہیں اسکی ایک وجہ یہ

کرپشن ماتم کرنے سے ختم نہیں ہوگی ! ۔۔۔ تحریر : شیخ خالد زاہد

پاکستان میں بڑھتی ہوئی آبادی اور اسکے ساتھ ساتھ بڑھتے ہوئے مسائل جہاں پاکستان کی ترقی کی شرح کی باگیں کھینچے رکھتے ہیں اور سست روی کا شکار معیشت کا سبب بنے ہوئے ہیں۔ تو دوسری طرف ہم اپنی معاشرتی

​​ڈونلڈ ٹرمپ کی سیاسی بصیرت ۔۔۔ تحریر : شیخ خالد زاہد

دنیا کو اسوقت سب سے زیادہ ضرورت مفاہمتی اور مصالحتی پالیسیوں کی ہے۔ دنیا کو پر امن رکھنے کی تدبیریں اور پالیسیاں اگر دنیا کہ ترقی یافتہ اور ترقی پذیر ممالک شروع کریں تو ان کے نتائج بروقت اور بہت

میں تو امتی ہوں !۔۔۔ تحریر : شیخ خالد زاہد

ہماری تہذیب تو اس بات کی اجازت نہیں دیتی مگر زمانے میں اب یہ ریت چل پڑی ہے کہ کچھ بھی ہوجائے سماجی میڈیا پر اس کا چرچا ضرور کیا جاتا ہے۔ کسی کی پیدائش کی خبر تو سماجی میڈیا

۔”مایوسی حفاظتی حصار توڑ دیتی ہے”۔۔۔ تحریر : شیخ خالد زاہد

کراچی میں طے شدہ ہفتہ وار “اوقات نامہ” کے مطابق سی این جی دستیاب ہوتی ہے۔ آج صبح (بروز بدھ) حسبِ معمول گھر سے دفتر آتے ہوئے آٹھ بجے سے پہلے پہلے گاڑی میں سی این جی ڈلوانی تھی کیونکہ

ہم کس کیلئے لکھ رہے ہیں؟۔۔۔ تحریر : شیخ خالد زاہد

کسی کے لئے کسی بات کو جاننا دورِ حاضر میں کوئی مشکل کام نہیں رہا، ہاں البتہ اسکے لئے آپکے پاس ذرائع ہونا ضروری ہے جس میں سب سے اول “انٹرنیٹ” کی سہولت ہے، اس سہولت کا آپکے پاس ہونا

ترقی کیلئے “لائن” میں لگنا پڑیگا۔۔۔ تحریر : شیخ خالد زاہد

ہر صبح قدرت انسان کو یہ پیغام دیتی ہے کہ دیکھ تیرے لئے ایک اور دن فراہم کردیا گیا ہے اور وقت کی قلت کے پچھتاوے جو تو رات ساتھ لے کرسوگیا تھا اور تجھے یہ یقین بھی نہیں تھا

لسانیت کی پرورش” ۔۔۔ تحریر : شیخ خالد زاہد”

دہشت گردی پاکستان اور پاکستانیوں کیلئے کسی دلدل کی مانند واقع ہوتی چلی گئی۔ جن جن ممالک کو اپنے اسلحے اور اپنی عسکری ماہرین کی صلاحیتوں پر بہت مان تھا سب نے دہشت گردی کے خلاف جنگ میں کودنے کا