ملنے چلے آؤ ۔۔۔ تحریر : شاعرہ ثناء خان تنولی

چھوڑ کر سب ہی سلسلے، ملنے چلے آؤ ۔۔۔
یہی موسم کا تقاضا ھے یہی میری مرضی!!۔

پہلے تو یوں کبھی دل میں اُداسی نہ تھی چھائی
یہی ضد ھے،، اور یہی ٹھہری دل کی عرضی!!۔

بُھول کر سب ہی تلخ یادوں کو چلے آؤ ۔۔۔
کہ کرنی ھیں تم سنگ باتیں ۔۔۔ چند فرضی!!۔

اِک لڑکی رہتی ھے انتظار میں ترے شام و سحر
مُحبت کے ہمراہ ۔۔۔۔۔۔ بنا کسی خود غرضی!!۔

(Visited 34 times, 1 visits today)

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *