شاعری ۔ اسماء طارق ۔ گجرات

خط جو لکھا اس نے آخری پنڈ کے نام
اس پہ لکھی کہانی میری زبانی تھی

وہ شرمندہ تھا یہ اک نئی کہانی تھی
پر پنڈ کی یہ لڑکی اتنی ہی پرانی تھی

وہ لڑکا تھا نئے زمانے کا اور تو پرانی
اسے تیری یاد کیونکر آنی تھی

چار دن کی یہ زندگانی تھی
اسے یونہی کیا گنوانی تھی

وہ لڑکا تھا شہری اور میں پنڈ کی رانی
بس اتنی سی تھی یہ رام کہانی

اسے انگریزی فر فر آتی تھی
مجھے اردو بھی مشکل سے سمجھ آتی تھی

اسے گاوں کی سادگی کہاں راس آنی تھی
جب شہر کی اسکی جوانی تھی

اسے بلی سے ڈر لگتا تھا
اور میری شیر سنگ یارانی تھی

انگریز اس کی استانی تھی
اسے پنجابی کہاں آنی تھی

وہ لڑکا تھا شہری اور میں پنڈ کی رانی
یہ کہانی راس کسے آنی تھی

(Visited 26 times, 1 visits today)

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *