مُجھے اِک تماشا بنا دیا ۔۔۔ تحریر : شاعرہ ثناء خان تنولی

میرے دل کے ہر اک تار پر
ترا نام تھا جو لکھا ہوا ۔۔۔
غمِ دل کی حسرتوں نےخار میں
اُسے رَگڑ رَگڑ کر مٹا دیا ۔۔۔ ! ۔

میری زُباں جو تیری مثال تھی۔۔۔
تیرے ہر اک سوال کا جواب تھی
موئے دل نے اُس کو بتا دیا ۔۔۔
ترے ہر اِک دَغے کا پتا دیا ۔۔۔!۔

میری آنکھیں جو کھلیں کتاب تھیں
ہر صبح ترے ہی لئے بیدار تھیں
غمِ زندگی نے انہیں بند کروا دیا
اور اشَکوں سے اُنہیں ملوا دیا ۔۔۔!۔

میرا جسم جو تجھ پہ نثار تھا
تری ہر اِک ادا پہ قربان تھا
تری رُوح نے اُس کو بہکا دیا
مجھے اِک تماشا بنا دیا ۔۔۔!۔

(Visited 15 times, 1 visits today)

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *