Tag Archives: زاہد توقیرؔ

غزل ۔۔۔ شاعر : زاہد توقیرؔ ۔ کمالیہ

کیا غضب ہے عجب منافق ہیں اور کہتے ہیں کب منافق ہیں؟۔ کیا یہاں ایک بھی نہیں مومن؟۔ کیا یہاں سب کے سب منافق ہیں؟۔ بے ادب مسندوں پر قابض ہیں چْپ ہیں سب با ادب منافق ہیں جن کو

نعتؐ شریف : زاہد توقیرؔ ۔ کمالیہ

سر یقین درودوں کا کارواں ٹھہرے تو تیرگی میں بھی روشن مرا مکاں ٹھہرے جو دیکھ پاؤں ترے در کی رحمت یکتا مری نگاہ زمانے میں پھر کہاں ٹھہرے رفیق جائیں کہاں چھوڑ کر تری قربت کہ تیرے در پہ

غزل ۔۔۔ شاعر : زاہد توقیرؔ ۔ کمالیہ

پھر مجھے خاک میں ہی چاہے ملایا جائے مجھکو اک بار مرے سامنے لایا جائے روز رونے سے بصارت بھی تو جا سکتی ہے روز مت اہل ستم مجھکو رلایا جائے شوق منزل نے ہی رستے کو سہارا ہوا ہے